خیر الدین پاشا باربروسا (پیدائش: 1475ء، انتقال: 1546ء) ایک ترک قزاق تھا جو بعد ازاں سلطنت عثمانیہ کی بحری افواج کا سربراہ مقرر ہوا اور کئی دہائیوں تک بحیرہ روم میں اپنی طاقت کی دھاک بٹھائے رکھی۔ وہ یونان کے جزیرہ مڈیلی (موجودہ لیسبوس) میں پیدا ہوا۔ اس کا انتقال استنبول میں ہوا۔ اس کا اصل نام خضر یعقوب اوغلو (خضر ابن یعقوب) تھا۔ خیر الدین کا لقب اسے عظیم عثمانی فرمانروا سلطان سلیمان قانونی نے دیا تھا۔ باربروسا کا نام اس نے اپنے بڑے بھائی بابا عروج (عروج رئیس) سے حاصل کیا تھا جو الجزائر میں ہسپانویوں کے ہاتھوں شہید ہوا تھا۔,,,
بابا عروج کی زیر نگرانی ابتدائی زندگی,,,,
خضر چار بھائیوں اسحق، عروج اور الیاس میں سے ایک تھا جو 1470ء کی دہائی میں یعقوب آغا اور ان کی عیسائی بیوی قطرینہ کے ہاں پیدا ہوا۔ چند مورخین یعقوب کو ایک سپاہی قرار دیتے ہیں جبکہ چند کا کہنا ہے کہ وہ سالونیکا کے قریب وردار کے شہر میں عثمانی فوج ینی چری کا حصہ تھا۔ ابتداء میں چاروں بھائیوں نے مشرقی بحیرہ روم میں تاجر اور جہازراں اور بعد ازاں قزاق کی حیثیت سے کام کیا جہاں ان کا ٹکراؤ اکثر و بیشتر جزیرہ رہوڈس پر موجود سینٹ جانز کے ناءٹس سے ہوتا تھا۔ ان جھڑپوں میں الیاس قتل ہوا جبکہ عروج کو گرفتار کرلیا گیا اور رہوڈز میں قید میں رکھنے کے بعد بطور غلام فروخت کردیا گیا۔ وہ غلامی کی زندگی سے فرار حاصل کرنے میں کامیاب ہوا ور پہلے اٹلی اوربعد ازاں مصر پہنچا۔ جہاں وہ مملوک سلطان قانصوہ غوری سے ملاقات میں کامیاب ہوگیا جس نے عروج کو عیسائیوں کے زیر قبضہ بحیرہ روم کے جزائر پر حملے کے لئے ایک جہاز عطا کیا۔
1505ء تک عروج نے تین مزید جہاز حاصل کرلئے اور جربا کے جزیرے پر چھاؤنی قائم کرنے میں کامیاب ہوگیا جس کی بدولت بحیرہ روم میں اس کارروائیوں کادائرہ مغرب کی جانب منتقل ہوگیا۔ 1504ء سے 1510ء کے دوران وہ اس وقت مشہور ہوا جب اس نے سقوط غرناطہ کے بعد عیسائیوں کے ہاتھوں اسپین سے نکالے گئے مسلمانوں کو شمالی افریقہ پہنچا۔ ہسپانوی مسلمانوں سے اس کا سلوک اتنا اچھا تھا کہ وہ ان میں بابا عروج کے نام سے مشہور ہوگیا اور یہی بابا عروج اسپین، اٹلی اور فرانس میں بگڑ کر باربروسا بن گیا۔ الجزیرہ کے لئے اسپین سے بچاؤ کاواحد راستہ عثمانی سلطنت میں ضم ہوجانا تھا اس لئے باربروسا نے الجزیرہ کو عثمانی سلطان کے سامنے پیش کردیا۔ سلطان نے الجزیرہ کو عثمانی سنجق (صوبہ) کے طور پر منظور کرلیا اور عروج کو ”پاشائے الجزیرہ“ اور ”مغربی بحیرہ روم میں بحری گورنر“ متعین کردیا۔ 1516ء میں عروج نے الجزیرہ پر قبضہ کر کرے بادشاہ بن بیٹھا۔ وہ دیگر شہروں پر بھی قبضہ کرنا چاہتا تھا لیکن 1518ء میں مقامی رہنما کی مدد کے لئے آنے والے ہسپانوی افواج کے خلاف جنگ کے دوران اپنے بھائی اسحاق سمیت ہلاک ہوگیا۔ اس کی عمر 55 سال تھی,,,۔
خیر الدین کے ابتدائی کارنامے,,,
بھائی کے مارے جانے کے بعد خیر الدین نے اس کی پالیسی کو جاری رکھا اور اسپین سے مظلوم مسلمانوں کو شمالی افریقہ لاتا رہا جس کی بدولت اسے اسپین کے مخالف مسلمانوں کی بڑی تعداد کی حمایت حاصل ہوگئی۔ اس نے 1519ء میں الجزیرہ پر قبضے کی کوشش کرنے والی اسپین اور اٹلی کی مشترکہ فوج کو شکست دی۔ 1529ء میں اس نے ایک ساحلی جزیرے پر ہسپانوی قلعے پر بھی قبضہ کرلیا۔ 1530ء میں اینڈریا ڈوریا نے باربروسا کو شکست دینے کے لئے حملے کی کوشش کی لیکن باربروسا کے بحری بیڑے کی آمد سے قبل ہی ڈر کر فرار ہوگیا۔,,
Labels:
Reactions: 

Enter your email address:

Delivered by FeedBurner

Live Match Score

فیس بک پر تلاش کریں

مفت اکاؤنٹ کھولیں

Jobs Career in photography today!

Jobs Career in photography today!
Click on ads and grab your job.

گوگل پلس followers

گوگل پلس followers