برطانوی مصنفہ ڈورِس لیسنگ کو نوآبادیاتی نظام، آزادیٔ نسواں اور خواتین کے حقوق سے متعلق بے باک تحریروں کے باعث نوبیل انعام سے سرفراز کیا گیا تھا۔ ادب کا نوبل انعام حاصل کرنے والی وہ سب سے زیادہ عمر رکھنے والی ادیبہ تھی۔ڈورِس لیسنگ انگریزی ہی کی نہیں بلکہ بین الاقوامی ادب کا سرمایہ تصور کی جاتی تھیں۔ ان کی تحریریں نظریات کی کشمکش، نسلی تعصب سے ابھرنے والے رویے، جینڈر سیاست کے علاوہ نفسیاتی عوامل کا بھرپور جائزہ پیش کرتی ہیں۔ وہ عصر حاضر کی نمائندہ لکھاری تصور کی جاتی تھیں۔ ناقدین کے مطابق اپنی تحریروں میں وہ اپنی ذات کی تلاش کے سفر میں تمام عمر روانہ رہیں۔ انہوں نے نسائیت پرستوں اور بائیں بازو کے ویلکم کرتے ہاتھوں کو ہمیشہ جھٹک دیا۔ یہ اور بات ہے کہ نسائی پرست ادیب اور بائیں بازو کے مصنفین ڈورِس لیسنگ کو ہمیشہ اپنے مقاصد کا حامی خیال کرتے رہے۔ڈورِس لیسنگ کے 55 ناول اور مختصر کہانیوں کے مجموعے شائع ہوئے ہیں۔ ہر ناول اچھوتے خیال کا حامل تھا اور ہر کہانی فنی اعتبار سے ایک مکمل شہ پارہ خیال کی جاتی ہے۔ نفسیاتی مسائل پر مبنی ناول ہو یا پہلی عالمی جنگ کے تجربات، ہر خیال تکنیک کے اعتبار سے بھی بلند پایہ تصور کیا جاتا ہے۔ اْن کا آخری ناول سن 2008 ء میں الفریڈ اور ایملی شائع ہوا تھا۔ڈورِس لیسنگ عمر بھر نسوانیت پسندوں کی تحریک کو تنقید کا نشانہ بناتی رہی ہیں۔ رحلت سے دس برس قبل دیے گئے ایک انٹرویو میں اْن کا کہنا تھا کہ خواتین کی حالت نسائیت پرست تنظیموں اور ادیبوں سے نہیں بلکہ سائنس اور ٹیکنالوجی کے ساتھ ساتھ گھریلو استعمال کی جدید مشینوں اور مانع حمل گولی سے تبدیل ہوئی ہے۔ ان کو 2007ء میں ادب کے نوبل انعام سے نوازا گیا تھا۔وہ 22 اکتوبر 1919ء کو ایرانی شہر کرمان شاہ میں پیدا ہوئی تھیں۔ برطانوی فوجی افسر کی بیٹی کا پیدائش پر نام ڈورِس مے ٹیلر رکھا گیا۔ ایران سے وہ اپنے خاندان کے ساتھ نقل مکانی کر کے برطانیہ کی افریقی نو آبادی رہوڈیشیا چلی گئیں۔ سابقہ رہوڈیشیا آزادی کے بعد اب زمبابوے کہلاتا ہے۔ وہ 14 برس سے زیادہ اسکول میں تعلیم حاصل نہ کر سکیں۔اسکول چھوڑنے کے بعد انہوں نے اپنی تخلیقی قوتوں کو ڈی ایچ لارنس، چارلس ڈکنز، فیودر دوستوفسکی اور لیْو ٹالسٹائی کے فن پاروں کا مطالعہ کر کے پختگی عطا کی۔ افریقہ میں قیام کے دوران اور بعد میں بھی ڈورِس لیسنگ نسلی امتیاز کی پالیسیوں کو شدید تنقید کا نشانہ بناتی رہیں۔ اسی باعث وہ برسوں رہوڈیشیا اور جنوبی افریقہ میں ناپسندیدہ شخصیت رہی-

Labels:
Reactions: 

Enter your email address:

Delivered by FeedBurner

Live Match Score

فیس بک پر تلاش کریں

مفت اکاؤنٹ کھولیں

Jobs Career in photography today!

Jobs Career in photography today!
Click on ads and grab your job.

گوگل پلس followers

گوگل پلس followers