عجیب سی بات ابھی دماغ میں ائی ، اور آتی ہی جا رہی ہے . ویسے کوئی منطق ہے تو نہیں مگر آ رہی ہے تو اس پر بات بھی کر لیتے ہیں اور کھول بھی لیتے ہیں . کوئی گھمبیر سمسیہ تو ہے نہیں. الف سے الله ہے، الف سے اسلام، الف سے احمدص، الف سے انسان. القران میں پہلی سورہ کا پہلا حرف الف سے الحمد. کیا اس پہ سب کا اتفاق ہے؟ ہو سکتا ہے، نہیں بھی ہو سکتا. الف کو لوگوں نے سوچا بھی بہت، اس پہ لکھا بھی بہت. مسلمانوں نے ہی نہیں سب نے بہت بہت دھیان اس حرف پر لگایا. اس کی کیا وجہ ہے. کسی اور حرف پر اتنی توجہ نہیں دی گئی. علما ہوں یا صوفیا سب نے اس حرف کو معمہ بتا دیا ہے. جو اٹھتا ہے، اور ہی ماورائی باتیں کرنے لگتا ہے.  تفصیل سے پڑھیے
علما اور صوفیا کے بعد سائنس کی باری آتی ہے. سائنس حرفوں اور لفظوں کے بارے میں کیا کہتی ہے؟ کیا سائنس چھتیس یا سینتیس حروف سے الگ اور الف سے الگ برتاؤ کرتی ہے. کیا حروف کی کوئی سائنس ہے؟ دین کا کیا کہنا ہے اس میں. اور دل کیا کہتا ہے،دماغ کیا. ہمیں کیا اس میں پھنسنا چاہئے. اس کا کہیں کوئی فائدہ ہے. کیا حضور پاک کی کسی حدیث سے یہ کلام اللہ سے کہیں بھی معلوم پڑتا ہے کہ حروف کی کوئی حقیقت ہے؟ ہاں یہ تو سمجھ آتی ہے کہ الله کا کلام پرُاثر تو ہے مگر اس کا یہ مطلب تھوڑا ہی نہ ہے کہ اثر کو گدڑسنگی سمجھ لیا جاے. اور اس کے مفروضے نکالے جائیں اور اس کو حضور پاک کی احادیث بنا دیا جاے.
میں یہ نہیں کہہ رہا کہ کلام الله یا کلام رسول کی تاثیر نہیں ہے. وہ با اثر ہے مگر اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہم تاثیر کو تار تار کر دیں. اس میں مطالب ڈال ڈال کے. آج کے حیرت انگیزعلوم دیکھ دیکھ کر لگتا ہے یہ مقصود نہیں ہے کہ ہم دنیا کو کیا دے رہے ہیں. غلط یا ٹھیک. ہمارا مسلہ کچھ اور ہی ہے. کسی کو بھی کسی طریقہ سے پھسانے کے لئے ہم کوئی عجیب اور انوکھی بات کر ڈالتے ہیں. لوگوں کو سیکھنے پر مجبور کر دیتے ہیں کہ مانو یہی صحیح ہے. حروف کی طاقت کا یہی مطلب ہے.ایسا ہے نہیں.
قرآن حضور پر آہستہ آہستہ نازل ہوا. قرآن کو سمجھنے کے فائدے پڑھنے سمجھنے والے ہی بتا سکتے ہیں. جو نہیں بھی جانتے، سن سن کر کہتے ہیں کہ قرآن یہ کہہ رہا ہے قرآن وہ کہہ رہا ہے. سب جانتے تو ہیں مناتے بھی ہیں تب ہی تو بیان کرتے ہیں. مگر عمل نہیں کرتے. تو جہاں تک قرآن کی بات ہے. اس کی آیات، سورتیں اور مقام ہی بات ہیں. وہ الله کا کلام ہے. ہم کو سارا قرآن پڑھ کر سمجھنے اور عمل کرنے کو کہا گیا ہے. کہا ہے خالق نے مالک نے. اس کا تاثیر سے، کام هونے سے، کامیابی هونے سے کوئی تعلق نہیں. الله کے کلام کو سمجھنا ہے جیسے کہ حکم کے. اور پکڑ کو یاد رکھنا ہے جیسے کہ ذکر ہے گزری اقوام کا. سو برکت ہوئی الله کو یاد رکھنے کی اور اس کے کلام کو اس کا کلام مان کر عمل کرنے کی.
باقی سب فراڈ ہے. الله کا کلام، تعویز بنا کر نہ گردن میں لٹکانا ہے نہ ہی بھر کے کونوں میں دم کا پانی چھڑکنا ہے. الله ایک ہے. اس کا کوئی شریک نہیں. اس کا لفظ بھی اس ہی کا محتاج ہے. قرآن میں کچھ اٹل حقیقتوں کا ذکر ہے. ان سے سبق سیکھنا ہے. ان کا تعویز بنا کر دروازے پر نہیں لٹکانا کہ اس کی تاثیر سے کام ہو گا. کام تو کام کرنے سے ہی ہو گا. پھوکیں مارنے سے نہیں. چلے کاٹنے سے نہیں. حروف الله کی مرضی سے ہی وجود پزیر ہے. حضور سے نہیں معلوم پڑا کہ الف کی تختی لکھتے رہو، یا اس کے سحرمیں مبتلا ہو جاؤ، یا الف کے مطلب نکالو. جب سیدھا دین ہمارے پاس موجود ہے. جزا سزا، احکام، ممانعت دونوں لکھ دیے گئے ہیں تو یہاں وہاں کہاں جانا.
کیا جس دعا یا کلام الله میں الف نه هو تو کیا وه الله کا کلام نہ ہے یا بااثر نہ ہو گا. الله کے کلام یعنی القران کے واقعات، کی تاثیر ہے کہ اپ عبرت پکڑیں، احکامات ہیں کہ عمل کریں. اس لے علاوہ اور کچھ نہیں کہا گیا. پیسے کیسے بنائیں، میاں بیوی میں دوستی کیسے ہو، کاروبار کیسے چمکے. ان سب کاموں کے لئے تعویز کی ضرورت تو نہ ہے بس الله پر یقین کرنا ہے. اور الله سے مانگنا ہے. دعا وہ کسی بھی زبان میں سنتا ہے، زبان کے بغیر بھی سنتا ہے. ہمارے دل و دماغ میں بات آنے سے پہلے ہی جانتا ہے ہم کیا چنتے ہیں. ہم جانتے نہیں ہیں کہ ہمارے لئے کیا بہتر ہے. وہ دیتا ہے جو وہ خود جانتا ہے کہ ہمارے لئے بہتر ہے. ہر شے اس کے قبضہ قدرت میں ہے. وہ جیسے چاہتا ہے کرتا ہے. ہم کو کسی ایسے علم کی کہانی الله کے کلام میں نہیں ڈالنی جس کا ہم ادراک نہیں گمان ہے. بس گمان اور اوہام پر مبنی ہے ہر کام.
اگر یقین محکم ہو کہ الله ہے. اور ہر کام وہی کرتا ہے تو خوامخواہ گھمن گھیریوں میں پڑنے کا فائدہ. الله ایک ہے اس کا کوئی شریک نہیں. اس کی رضا کے بغیر پتا بھی نہیں ہلتا. ہم جتنے حرفوں کے نمبر نکال لیں یا جوڑ جوڑ کے تاثیریں، کسی کام کی کوئی حقیقت نہیں. ہاں نتائج الله کی طرف سے نکلتے ہیں اور وہ لوگ ان گنتیوں میں ڈال دیتے ہیں جو ان نے خود کی ہوتی ہیں. الله ایسا هونے دیتا ہے تاکہ وہ خود کی گمراہی میں ایسا ِگھر جاے کہ نکل نہ ہی پاے. اگر آپ اب تک اس گروہ کا حصہ نہیں بنے تو دعا کریں کہ الله نہ ہی بناے. آمین

Enter your email address:

Delivered by FeedBurner

Live Match Score

فیس بک پر تلاش کریں

مفت اکاؤنٹ کھولیں

Jobs Career in photography today!

Jobs Career in photography today!
Click on ads and grab your job.

گوگل پلس followers

گوگل پلس followers